rss

برما کے حالات پر سلامتی کونسل کے اجلاس میں سفیر ہیلی کا بیان

English English, العربية العربية, Français Français, हिन्दी हिन्दी

امریکی مشن برائے اقوام متحدہ
دفتر اطلاعات و عوامی سفارتکاری
برائے فوری اجرا
28 ستمبر 2017

 
 

اقوام متحدہ میں امریکہ کی مستقل سفیر نکی ہیلی نے برما کی ریاست راخائن میں جاری انسانی بحران اور روہنگیا و دیگر اقلیتی گروہوں کے خلاف تشدد سے ملک میں جمہوری تبدیلی کو لاحق خطرات پر آج سہ پہر سلامتی کونسل کے اجلاس سے خطاب کیا۔

اس موقع پر انہوں نے کہا کہ ‘ہم برمی حکام کے اقدامات کو ملک سے ایک نسلی اقلیت کے خاتمے کی وحشیانہ اور مستقل مہم قرار دینے سے خوفزدہ نہیں ہو سکتے۔ یہ برما کے اعلیٰ رہنماؤں کے لیے شرمناک امر ہونا چاہیے جنہوں نے ایک کھلے اور جمہوری برما کے لیے اس قدر قربانیاں دی تھیں’ ۔

نکی ہیلی نے کہا کہ ‘سلامتی کونسل میں نیک ارادوں اور سفارتی زبان کا وقت گزر چکا ہے۔ اب ہمیں برما کی سکیورٹی فورسز کے خلاف اقدامات پر غور کرنا ہو گا جس نے اپنے ہم وطنوں کے خلاف بدسلوکی کا ارتکاب کیا اور ان میں نفرت کی آگ بھڑکائی ہے’ ۔

سفیر ہیلی کا کہنا تھا کہ ‘میں براہ راست برمی عوام سے بات کرنا چاہوں گی۔ میں مستقبل کے لیے اس اچھائی اور امید کو آواز دینا چاہوں گی جو آپ کی غالب اکثریت کے دلوں میں موجود ہے۔ آپ میں بہت سے لوگوں نے ایک بہتر ملک کے لیے بہت سی قربانیاں دی ہیں۔ میں جانتی ہوں کہ آپ برما میں تشدد دیکھ کر تنگ آ چکے ہیں تاہم ایک کھلے اور جمہوری برما کا مقصد اب بھی قابل حصول ہے۔ اس تصور کے ساتھ مضبوطی سے جڑے رہیے۔ امید قائم رکھیے اور ایسے رہنماؤں پر تکیہ مت کیجیے جو امید چھوڑ چکے ہیں۔ ہر برمی مرد، عورت اور بچہ خدا کی تخلیق ہیں جو یکساں اخلاقی حیثیت کے حامل ہیں۔ اس ایقان پر مضبوطی سے قائم رہیے اور وہ مستقبل آپ کے ہاتھ میں ہو گا جس کا آپ نے خواب دیکھا تھا اور جس کے آپ حق دار ہیں’ ۔

بیان کی مکمل نقل کے لیے: https://usun.state.gov/remarks/7998

# # #


اصل مواد دیکھیں: https://usun.state.gov/remarks/7998
یہ ترجمہ ازراہِ نوازش فراہم کیا جا رہا ہے اور صرف اصل انگریزی ماخذ کو ہی مستند سمجھا جائے۔
تازہ ترین ای میل
تازہ ترین اطلاعات یا اپنے استعمال کنندہ کی ترجیحات تک رسائی کے لیے براہ مہربانی اپنی رابطے کی معلومات نیچے درج کریں