rss

یونیسکو سے امریکہ کی علیحدگی

Français Français, English English, العربية العربية, हिन्दी हिन्दी, Português Português, Русский Русский, Español Español

یونیسکو سے امریکہ کی علیحدگی
دفتر برائے ترجمان
برائے فوری اجرا
ترجمان ہیدا نوئرٹ کا بیان
12 اکتوبر 2017

 

 

12 اکتوبر 2017 کو امریکی دفتر خارجہ نے یونیسکو کی ڈائریکٹر جنرل ایرینا بکووا کو تنظیم سے علیحدگی کے امریکی فیصلے کے بارے میں باقاعدہ طور پر مطلع کر دیا ہے اور یہ کہ اس کی بجائے امریکہ یونیسکو میں اپنا مستقل مبصر مشن قائم کرنا چاہتا ہے۔ یہ آسان فیصلہ نہیں تھا ور یونیسکو کے بڑھتے ہوئے بقایا جات ، تنظیم میں بنیادی اصلاحات کی ضرورت اور یونیسکو میں مستقل اسرائیل مخالفت پر امریکی تشویش کا غماز ہے۔

امریکہ نے ڈائریکٹر جنرل سے تنظیم کے ساتھ رکن کی بجائے مبصر کے طور پر منسلک رہنے کی اپنی خواہش کا اظہار کیا ہے تاکہ امریکی خیالات، نقطہ نظر اور عالمی ورثہ کے تحفظ، آزادی صحافت کے لیے آواز بلند کرنے اور سائینسی تعاون اور تعلیم  کی ترویج سمیت تنظیم کی بعض اہم ذمہ داریوں  پر ماہرانہ رائے میں اپنا حصہ ڈالا جا سکے۔

یونیسکو کے آئین کی شق II(6) کے تحت ، امریکہ کی تنظیم سے علیحدگی 31 دسمبر 2018 کو عمل میں آئے گی، تب تک امریکہ یونیسکو کو رکن رہے گا۔

###

 


یہ ترجمہ ازراہِ نوازش فراہم کیا جا رہا ہے اور صرف اصل انگریزی ماخذ کو ہی مستند سمجھا جائے۔
تازہ ترین ای میل
تازہ ترین اطلاعات یا اپنے استعمال کنندہ کی ترجیحات تک رسائی کے لیے براہ مہربانی اپنی رابطے کی معلومات نیچے درج کریں