rss

پہلے امریکہ: صدر ڈونلڈ جے ٹرمپ کی کامیاب خارجہ پالیسی

हिन्दी हिन्दी, English English, العربية العربية, Français Français, Português Português, Русский Русский, Español Español

وائٹ ہاؤس
دفتر سیکرٹری اطلاعات
برائے فوری اجرا
30 جنوری 2018
پہلے امریکہ: صدر ڈونلڈ جے ٹرمپ کی کامیاب خارجہ پالیسی

 
 

صدر ڈونلڈ جے ٹرمپ کی خارجہ پالیسی میں امریکہ کو مقدم رکھا گیا ہے

‘ہم اندرون ملک امریکی طاقت اور اعتماد کی ازسرنو تعمیر کرتے ہوئے بیرون ملک بھی اپنی طاقت اور مقام بحال کر رہے ہیں’ صدر ڈونلڈ جے ٹرمپ

نئی راہ کی تخلیق: صدر ڈونلڈ جے ٹرمپ کی خارجہ پالیسی امریکی عوام کے مفادات اور سلامتی کو مقدم بنا رہی ہے۔

صدر ٹرمپ نے حال ہی میں اپنی قومی سلامتی کی حکمت عملی 2018 کا اجرا کیا ہے جو امریکی عوام کی حفاظت، ہمارے طرز زندگی کے تحفظ، ہماری خوشحالی کے فروغ، طاقت کے ذریعے قیام امن اور دنیا میں امریکی رسوخ کے فروغ کے لیے درکار تزویراتی تصور مہیا کرتی ہے۔

امریکی انتظامیہ سمجھتی ہے کہ معاشی تحفظ ہی دراصل قومی تحفظ ہوتا ہے۔

صدر ٹرمپ ایسی پالیسیوں پر عملدرآمد کر رہے ہیں جن سے بڑی تعداد میں نئی ملازمتیں پیدا ہوئی ہیں اور ہمارے ملک کی معاشی بنیاد مضبوط بنانے میں مدد ملی ہے۔

امریکہ ایک مرتبہ پھر قائدانہ کردار ادا کر رہا ہے اور بنیاد پرستی و انتہاپسندی کا مقابلہ کرتے ہوئے ہمارے جیسے اہداف و مفادات کے حامل ممالک کے ساتھ تعلقات میں مضبوطی سے ثابت ہوا ہے کہ پہلے امریکہ کا مطلب صرف امریکہ نہیں ہے۔

صدر ٹرمپ امریکی مسلح افواج کو جدید بنانے اور ان کی تعمیرنو سے ‘طاقت کے ذریعے امن کے حصول’ کی حکمت عملی پر عمل پیرا ہیں۔ ہمارے ملک کے پہلے صدر جارج واشنگٹن کے بقول ‘جنگ کی تیاری امن کی حفاظت کا موثر ترین ذریعہ ہے’

صدر کی قومی سلامتی کی حکمت عملی ہماری جوہری فورسز کو جدید بنائے گی اور اس کی بدولت جدید ترین بلسٹک میزائل دفاعی نظام ترتیب دیا جائے گا۔

دہشت گردی کے خلاف جنگ: صدر ٹرمپ کی قیادت میں امریکہ اپنی سرزمین اور شہریوں کے لیے خطرے کا باعث بننے والے دہشت گردوں کو شکست دے رہا ہے۔

مقامی فورسز کے ساتھ کام کرنے اور میدان جنگ میں اپنے کمانڈروں کو مزید لچک دار اختیارات کی فراہمی سے ہم نے داعش کو قریباً مکمل طور پر شکست دے دی ہے۔

جب سے صدر ٹرمپ نے عہدہ سنبھالا ہے داعش نے عراق اور شام میں اپنے زیرتسلط 100 فیصد علاقہ کھو دیا ہے۔

ہم اپنے شراکت داروں کے ساتھ مل کر داعش کے ہزاروں مفرور جنگجوؤں کا پیچھا جاری رکھیں گے اور جب تک داعش کو دیرپا شکست نہیں ہو جاتی اور عالمگیر جہادیوں اور ان کے نیٹ ورکس کا قلع قمع نہیں ہوتا اس وقت تک ہم چین سے نہیں بیٹھیں گے۔

صدر ٹرمپ بنیادپرستانہ اسلامی دہشت گردی اور اسے قائم رکھنے والے نظریے کا مقابلہ کرنے اور اسے شکست دینے کی کوششوں کو ترجیح دیتے ہوئے امریکی سلامتی کو لاحق خطرات سے کڑے طور پر نمٹیں گے۔

صدر ٹرمپ کی حالات کی بنیاد پر جنوبی ایشیائی حکمت عملی سے امریکی فوج کے کمانڈروں کو افغانستان اور پاکستان میں دہشت گردوں کی محفوظ پناہ گاہوں کے خاتمے کے لیے درکار اختیار اور وسائل میسر آئے ہیں۔

صدر مشرق وسطیٰ میں ہمارے اتحادیوں اور شراکت داروں میں امریکی قیادت کا دعویٰ نو کر رہے ہیں۔

اس میں مشرق وسطیٰ میں امریکی اتحادیوں اور شراکت کاروں کو جدوجہد میں شریک کرنا، دہشت گردی کے پروپیگنڈے کی روک تھام کے لیے قابل اعتبار آوازوں کو بااختیار بنانا اور جبر و انتہاپسندی کے بڑے متبادل کے طور پر ہمارے کھلے معاشرے کا فروغ شامل ہے۔

صدر ٹرمپ ہمارے اتحادیوں پر واضح کر رہے ہیں کہ دہشت گردی کی حمایت یا اس سے چشم پوشی کر کے وہ امریکہ کے دوست نہیں بن سکتے۔

صدر نے پاکستان کے لیے سکیورٹی کی مد میں امداد معطل کر دی ہے اور یوں امداد وصول کرنے والے ممالک کو یہ پیغام دیا ہے کہ ہم ان سے دہشت گردی کے خلاف کارروائی میں مکمل تعاون کی توقع رکھتے ہیں۔ طویل عرصہ سے اس پیغام کی ضرورت محسوس کی جا رہی تھی۔

امریکی سرزمین کا تحفظ: صدر ٹرمپ ہماری سرحدوں کو محفوظ بنا رہے ہیں اور ہمارے ہمسایوں میں تشدد کا خاتمہ کر رہے ہیں۔

انتظامیہ نے امریکہ داخلے کے لیے انتہائی کڑا جائزہ اور اضافہ شدہ جانچ پڑتال کا عمل شروع کیا ہے تاکہ دہشت گردوں، بین الاقوامی مجرموں اور دوسرے خطرناک کرداروں کا ہمارے ملک میں پہنچنا بہت مشکل ہو جائے۔

خواہ لوگ یہاں سیاح کے طور پر آئیں، کاروباری مہمان، تارکین وطن یا مہاجرین کے طور پر آئیں، امریکہ آنے والے راستے اب مزید محفوظ ہو گئے ہیں۔

صدر ہمارے شہریوں کی سلامتی یقینی بنانے کے لے عالمی شراکت داروں کے ساتھ کام کرتے رہیں گے۔

اب تمام ممالک کو اپنے شہریوں کی بابت اہم معلومات کا امریکہ سے تبادلہ کرنا ہو گا تاکہ ہمیں اندازہ ہو سکے کہ کون ہمارے ملک میں داخل ہو رہا ہے، بصورت دیگر انہیں نتائج کا سامنا ہو گا۔ ہمارے تحفظ کی صورتحال بہتر بنانے کے لیے انتظامیہ نے سلامتی کی مد میں تعاون کی بنیاد میں اضافہ کیا ہے اور بیشتر ممالک نے اس ضمن میں امریکہ سے تعاون کی پالیسی اپنائی ہے۔

گزشتہ برس صدر کی جانب سے یہودی سکولوں کو لاحق تشویش ناک خدشات کو نمایاں کیے جانے کے بعد ٹرمپ انتظامیہ نے ان خطرات کے منبع کو ختم کرنے کے لیے اسرائیلی ہم منصبوں کے ساتھ مل کر کام کیا۔

اندرون ملک ایم ایس 13 کے قریباً 800 ارکان کی گرفتاریوں کے علاوہ ٹرمپ انتظامیہ نے ایم ایس 13 کے قریباً 4000 ارکان کی گرفتاری اور ان پر فردجرم عائد کرنے کے لیے وسطی امریکی شراکت کاروں کے ساتھ کام کیا ہے۔

اتحادیوں کی حوصلہ افزائی اور دشمنوں کے خلاف مزاحمت: صدر اہم اتحادوں کو بحال کر رہے ہیں اور ہمارے دشمنوں کا مقابلہ کرنے کے لیے اتحادیوں اور شراکت داروں کے ساتھ کام کر رہے ہیں۔

صدر ٹرمپ بحرہندوالکاہل کے خطے میں کاروبار اور تجارت کو تحفظ دے کر امریکہ کے تعلقات کی ازسرنو وضاحت کر رہے ہیں۔ اس اقدام سے امریکی کارکنوں اور ہماری معیشت کو فائدہ پہنچے گا۔

صدر ٹرمپ شمالی کوریا کو جوہری ہتھیاروں کے خاتمے پر آمادہ کرنے کے لیے اس پر زیادہ سے زیادہ دباؤ ڈالنے کی غرض سے دنیا کو اکٹھا کرتے رہیں گے۔

صدر ٹرمپ مشرق وسطیٰ میں امریکی قیادت کو بحال کر رہے ہیں، اسرائیل کے ساتھ تعلقات ازسرنو ترتیب دے رہے ہیں اور خطے میں جارحین کا مقابلہ کرنے کے لیے موثر اقدامات اٹھانے میں مصروف ہیں۔

دسمبر میں صدر نے سرکاری طور پر یروشلم کو اسرائیلی دارالحکومت تسلیم کیا اور اسرائیل میں امریکی سفارت خانے کو اسی شہر میں منتقل کرنے کا اعلان کیا۔

ٹرمپ انتظامیہ ایران کے تخریبی رویے اور اس کے جوہری پروگرام سے لاحق خطرے کی روک تھام کر رہی ہے۔ اس مقصد کے لیے ایرانی جوہری معاہدے میں سنگین خامیاں دور کرنے کے ساتھ درجنوں ایرانی حکام اور اداروں پر پابندیاں لگائی جا رہی ہیں۔

صدر ٹرمپ نیٹو اتحاد مضبوط بنانے کے لیے کامیاب طور سے ہمارے شراکت داروں کی حوصلہ افزائی کر رہے ہیں کہ وہ دفاعی اخراجات کے حوالے سے اپنے وعدے پورے کریں اور اجتماعی دفاع کے لیے اپنے حصے کا بوجھ اٹھائیں۔

صدر ٹرمپ اقوام متحدہ میں اصلاحات کے لیے زور دے رہے ہیں اور اقوام متحدہ کے ان اداروں کے فنڈ روکنے پر غور کریں گے جو کروڑوں لوگوں کی محتاجی کو دوام دیتے ہیں۔


یہ ترجمہ ازراہِ نوازش فراہم کیا جا رہا ہے اور صرف اصل انگریزی ماخذ کو ہی مستند سمجھا جائے۔
تازہ ترین ای میل
تازہ ترین اطلاعات یا اپنے استعمال کنندہ کی ترجیحات تک رسائی کے لیے براہ مہربانی اپنی رابطے کی معلومات نیچے درج کریں