rss

امریکی وزیرخارجہ مائیک پومپئو کی جہاز میں صحافیوں سے بات چیت

Français Français, English English, العربية العربية, हिन्दी हिन्दी, Português Português, Русский Русский, Español Español

امریکی دفتر خارجہ
دفتر برائے ترجمان
برائے فوری اجرا
9 مئی 2018

 

یوکوٹا ایئربیس، جاپان

وزیر خارجہ پومپئو: ہمارا دن یوں بہت اچھا رہا کہ میری چیئرمین کم سے صدارتی کانفرنس کی تیاری کے حوالے سے اچھی اور طویل بات چیت ہوئی۔ ہم نے اس ملاقات کی تاریخ اور وقت طے کر لیا ہے۔ ہم ابھی اس کا اعلان کرنے کو تیار نہیں ہیں مگر ہمیں امید ہے کہ آئندہ چند روز میں اس ملاقات کی جگہ، تاریخ اور وقت بتا سکیں گے۔ ہم نے یہ معاملات طے کر لیے ہیں اور اب ہمارے پاس بامعنی طور سے اس بارے میں بات چیت کا موقع ہے جسے ہم ایجنڈے پر رکھنا چاہتے ہیں اور یہ کہ ہم کانفرنس سے پہلے آنے والے دنوں میں رابطے کا آغاز کیسے کریں گے۔ فریقین دونوں رہنماؤں کے مابین کامیاب ملاقات کے لیے حالات ترتیب دینے کے لیے پراعتماد ہیں۔

ہمارے ساتھ جہاز میں تین امریکی بھی موجود ہیں جو کہ نہایت خوشی کی بات ہے۔ ان کی صحت اچھی معلوم ہوتی ہے۔ اب ڈاکٹر ان کے ساتھ ہیں تاہم اس مرحلے پر تمام علامات سے یہی ظاہر ہوتا ہے کہ دوران قید ان کی حالت جتنی اچھی ہو سکتی تھی اتنی ہی بہتر ہے۔ یہ سب خود سیڑھیاں چڑھ کر اپنی قوت کے بل بوتے پر اوپر آئے۔ امید ہے کہ آئندہ چند گھنٹوں میں ان کی صورتحال بارے مزید مکمل تفصیل سامنے آ جائے گی۔

سوال: کیا وہ یہیں رہیں گے یا آپ کے ساتھ واشنگٹن واپس جائیں گے؟

وزیرخارجہ پومپئو: وہ ہمارے ساتھ  واپس جا رہے ہیں۔ ایک اور جہاز جاپان میں ہم سے آن ملے گا اور اس جہاز میں ان کے لیے ضرورت کی مزید بہتر طبی سہولیات موجود ہوں گی۔ بظاہر ایسا نہیں لگتا کہ انہیں اس کی ضرورت ہو گی مگر ہم اس کی تیاری کر رکھی تھی۔ لہٰذا  وہ اس جہاز پر بھی رہ سکتے ہیں اور ہم انہیں دوسرے جہاز میں بھی منتقل کر سکتے ہیں، تاہم جو بھی ہو وہ ہمارے ساتھ واشنگٹن واپس آ رہے ہیں۔

سوال: کیا اس دوران کوئی ایسی گڑبڑ  بھی ہوئی جس نے آپ کو سنجیدگی سے یہ سوچنے پر مجبور کیا ہو کہ کام خراب بھی ہو سکتا ہے؟

وزیرخارجہ پومپئو: یہ ایک طویل دن تھا۔ تاہم ایسا کوئی لمحہ نہیں آیا جب میں نے یہ محسوس کیا ہو کہ ہمیں کامیابی نہیں ملے گی۔ کوئی خرابی نہیں ہوئی، مگر ہم شاید 13 گھنٹے وہاں رہے، کیا آغاز سے اختتام تک ایسی کوئی چیز؟ تو یہ ایک طویل دن تھا۔ ہمارے ہم منصبوں، شمالی کوریا کی ٹیم کے لیے بھی  یہ طویل دن تھا۔ تاہم یہ وقت اور کوشش بہت اہم تھی اور میں سمجھتا ہوں کہ یہ نہایت مفید رہی۔

سوال: جب آپ نے یہ کہا کہ آپ نے تاریخ اور وقت طے کر لیا ہے (ناقابل سماعت)

وزیرخارجہ پومپئو: جگہ بھی، میں معذرت چاہتا ہوں، جگہ بھی طے کر لی گئی ہے۔ تاریخ، وقت اور مقام سب طے ہیں۔

سوال: اس میں کتنا وقت لگے گا؟ آپ نے ایسی کوئی بات کی تھی مگر مجھ پر یہ واضح نہیں ہو پائی۔

وزیرخارجہ پومپئو: ہاں، ہم  اس حوالے سے منصوبہ بندی کر رہے ہیں کہ یہ  ملاقات ایک ہی دن میں ہو گی، مگر اس حوالے سے مزید بات چیت ہونا باقی ہے۔ اسے دوسرے دن تک لے جانے کا موقع بھی ہو گا۔

سوال: کیا قیدیوں کی رہائی سے یہ راہ ہموار ہوئی؟ کیا ایسا نہ ہوتا تو بھی آپ پیش رفت کرتے؟

وزیرخارجہ پومپئو: معذرت چاہتا ہوں، مجھے آپ کی بات سمجھ نہیں آئی۔

سوال: اگر یہ لوگ بدستور قید میں ہوتے تو کیا تب بھی آپ لوگ کانفرنس میں شریک ہوتے؟

وزیرخارجہ پومپئو: مجھے اندازہ نہیں کہ اس کا جواب کیا ہو گا۔ تب یہ کام مزید مشکل ہوتا  اور یقیناً وہ صورتحال موجودہ حالات سے زیادہ مشکل ہوتی۔ مجھے خوشی ہے کہ ہمیں ایسے حالات کا سامنا نہیں ہوا۔

سوال: اسی دن ایران کے حوالے سے اعلان ہوا ہے۔ پانچ یا چھ امریکی ایران میں قید ہیں۔

وزیرخارجہ پومپئو: جی ہاں۔

سوال: لوگ یہ بھی کہہ سکتے ہیں کہ آپ بعض امریکیوں کو تو رہا کرا رہے ہیں مگر بعض کو پیچھے چھوڑ دیا ہے۔

وزیرخارجہ پومپئو: ہم ان تمام کی رہائی کے لیے اپنی پوری کوشش کر رہے ہیں۔ بہت سی جگہوں پر امریکی شہری قید میں ہیں۔ شام میں بھی امریکی قید ہیں۔ جب میں سی آئی اے کا ڈائریکٹر تھا تو میں دیکھ سکتا تھا کہ دفتر خارجہ اور تمام امریکی حکومت کی توجہ تمام امریکیوں کی واپسی پر مرکوز تھی  خواہ وہ کہیں بھی ہوں۔

سوال: کیا آپ بتا سکتے ہیں کہ کون سی بات نے کم کو امریکیوں کے حوالے سے اس فیصلے پر مجبور کیا؟

وزیرخارجہ پومپئو: میں اس بارے میں نہیں جانتا۔ میرا خیال ہے کہ چیئرمین کم کانفرنس کے لیے سازگار حالات پیدا کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ میں سمجھتا ہوں کہ ہمارے مابین اچھی اور مفید بات چیت ہو رہی ہے۔ چنانچہ میری رائے میں اس حوالے سے صدر ٹرمپ کے کام نے یہ سب کچھ ممکن بنایا۔

سوال: آپ ہمیں یہ نہیں بتانا چاہتے کہ یہ کانفرنس کس جگہ منعقد ہو گی؟ آپ ہمیں نہیں بتانا چاہتے کہ اس کانفرنس کا مقام کیا ہو گا؟

وزیرخارجہ پومپئو: میں نہیں بتا سکتا۔

سوال: کیا آپ سمجھتے ہیں کہ اس موقع پر مشترکہ اعلامیہ جاری کیا جائے گا؟

وزیرخارجہ پومپئو: یہ ۔۔۔۔

سوال: جب آپ نے چند دن کی بات کی ہے۔۔۔

وزیرخارجہ پومپئو: وہ کیا ہے؟

سوال: جب آپ نے چند دن جیسا کہ اختتام ہفتہ کی بات کی؟

وزیرخارجہ پومپئو: ہمیں امید ہے کہ آج، آج کیا دن ہے، بدھ ہے؟ ہمیں آئندہ ہفتے کے آغاز پر یہ عمل شروع ہونے کی امید ہے۔

ہیدا نوئرٹ: جی، جی۔

سوال: آگے بڑھنے کے لیے ۔۔۔

عملہ: دراصل وہ ان سے کسی بابت تازہ ترین معلومات لے رہے ہیں ۔۔۔

وزیرخارجہ پومپئو: ٹھیک ہے۔

سوال: مختصراً قیدیوں کی جانب واپس جاتے ہیں، کیا آپ ہمیں بتا سکتے ہیں کہ آپ کے ابتدائی الفاظ کیا تھے جب ۔۔۔

وزیرخارجہ پومپئو: میں معذرت چاہتا ہوں، مجھے آپ کی آواز سننے میں مشکل کا سامنا ہے۔

سوال: قیدیوں کے موضوع پر واپس جاتے ہیں، کیا آپ ہمیں بتا سکتے ہیں کہ آپ نے ان سے پہلی بات کیا کی تھی اور اپنا سر چھت سے مت ٹکرائیں؟

وزیرخارجہ پومپئو: میں یہ دونوں کام کرنے کی ہرممکن کوشش کروں گا۔ میں نے انہیں واپس خوش آمدید کہا۔ اگرچہ ہم ابھی وطن واپس نہیں پہنچے، تاہم میں نے انہیں خوش آمدید کہا۔ یقیناً وہ اس جہاز میں ہمارے ساتھ موجود ہونے پر خوش تھے۔

ہیدا نوئرٹ: کیا میں انہیں بتا سکتی ہوں کہ انہوں نے کیا کہا؟ کیا میں انہیں بتا سکتی ہوں کہ انہوں نے ہمیں کیا کہا؟

وزیرخارجہ پومپئو: میں نہیں جانتا کہ یہ مناسب ہے یا نہیں، غالباً نہیں ہے۔

سوال: انہوں نے آپ سے کیا کہا؟

وزیرخارجہ پومپئو: جی، میں ۔۔۔

سوال: ہمیں یہ جان کر خوشی ہو گی۔ (ناقابل سماعت)

وزیرخارجہ پومپئو: میں ان کی پرائیویسی کا احترام کرنا چاہتا ہوں۔ میں نے خوشی سے یہ باتیں کیں مگر ۔۔۔

سوال: ٹھیک ہے، اگر وہ واپس آنا اور ہم سے بات کرنا چاہیں تو ہمیں خوشی ہو گی۔

وزیرخارجہ پومپئو: غالباً کسی اور دن۔

سوال: کیا کوئی ایسا لمحہ بھی آیا جب آپ نے خود کو تھپکی دی ہو یا ۔۔۔

وزیرخارجہ پومپئو: ہم نے ابھی بہت سا  کام کرنا ہے۔ مجھے خوشی ہے کہ ہم انہیں واپس لائے۔ مجھے خوشی ہے کہ صدر ٹرمپ نے ایسے حالات پیدا کیے جن کی بدولت یہ سب کچھ ممکن ہوا اور میں اس حوالے سے پرجوش ہوں۔ تاہم ابھی حتمی مقصد کے حصول کے لیے بہت سا کام ہونا باقی ہے۔

صرف ایک اور بات جو مجھے بتانی چاہیے وہ یہ کہ میں نے صدر سے بات کی تھی۔ میں نے صدر کو اس بابت اطلاع دی اور جب ہم لینڈ کریں گے تو صدر ہم سے ملنا چاہیں گے۔

سوال: اینڈریوز میں؟

وزیرخارجہ پومپئو: اینڈریوز پر۔ دو سے تین بجے کے درمیان کسی وقت اور میں نہیں جانتا کہ کب ۔۔۔۔

سوال: ٹھیک ہے، یہ ایک بڑا ۔۔۔۔

وزیرخارجہ پومپئو: جب بھی ہم وہاں پہنچے ، وہ وہاں آنے کا منصوبہ بنا رہے ہیں۔

سوال: وائٹ ہاؤس نے اس کا اعلان نہیں کیا؟

ہیدا نوئرٹ: جی آپ نے کیا کہا؟

سوال: کہ

ہیدا نوئرٹ: جی

وزیرخارجہ پومپئو: کیا اس کا اعلان کیا گیا ہے؟ میں نے  یہ نہیں دیکھا۔

سوال: یقیناً

وزیرخارجہ پومپئو: میں نہیں جانتا کہ آیا انہوں نے اس کا اعلان کیا ہے یا نہیں۔ ہو سکتا ہے کیا ہو، وہ ابلاغ کے معاملے میں قدرے تیز ہیں۔ میں ۔۔۔

سوال: کیا ہم فضائی حدود میں داخل ہو چکے ہیں ۔۔۔۔

وزیرخارجہ پومپئو: جی

سوال: کیا آپ جانتے ہیں ایسا کس وقت ہوا۔

ہیدا نوئرٹ: میں آپ کو وقت بتا دوں گی۔

وزیرخارجہ پومپئو: جی

ہیدا نوئرٹ: او کے۔

وزیرخارجہ پومپئو: ٹھیک ہے۔

ہیدا نوئرٹ: شکریہ

سوال: کیا انہوں نے اس لمحے خوشی منائی؟ کیا آپ واپس گئے اور کہا کہ ‘یہ لو، ہم شمالی کوریا کی فضائی حدود سے باہر آ گئے ہیں’؟ کیا آپ نے اس کی خوشی منائی؟

وزیرخارجہ پومپئو: جب ہمیں یہ پتا چلا کہ ہم شمالی کوریا کی حدود سے باہر آ گئے ہیں تو ہم سب کو بے حد خوشی ہوئی۔ جی میڈم

ٹھیک ہے، آپ سبھی کا شکریہ۔


یہ ترجمہ ازراہِ نوازش فراہم کیا جا رہا ہے اور صرف اصل انگریزی ماخذ کو ہی مستند سمجھا جائے۔
تازہ ترین ای میل
تازہ ترین اطلاعات یا اپنے استعمال کنندہ کی ترجیحات تک رسائی کے لیے براہ مہربانی اپنی رابطے کی معلومات نیچے درج کریں