rss

حقائق نامہ ۔۔۔ تحفظ اطفال کی مربوط شراکتیں

中文 (中国) 中文 (中国), English English, العربية العربية, Français Français, हिन्दी हिन्दी, Português Português, Русский Русский, Español Español

پی ڈی ایف – ڈاؤن لوڈ کریں

امریکی محکمہ خارجہ
انسانی بیوپار کی نگرانی اور خاتمے کا دفتر
واشنگٹن ڈی سی
جون 2018

حقائق نامہ ۔۔۔ تحفظ اطفال کی مربوط شراکتیں

تحفظ اطفال کی مربوط شراکت (سی پی سی) سے کیا مراد ہے؟

‘سی پی سی’ شراکت سے مراد امریکہ اور کسی خاص ملک کا مشترکہ طور پر تیار کردہ ایک ایسا کئی سالہ منصوبہ ہے جس میں بچوں کے بیوپار میں ملوث عناصر کے خلاف موثر قانونی کارروائی، ایسے جرائم سے متاثرہ بچوں کو صدمے سے آگاہی پر مبنی جامع نگہداشت کی فراہمی اور بچوں کی خریدوفروخت کی تمام اقسام کی روک تھام کی کوششیں مضبوط بنانے کی غرض سے مشترکہ مقاصد کے حصول کی خاطر دونوں حکومتوں کی ذمہ داریوں کا تعین کیا جاتا ہے۔ دیکھیے 22 یو ایس سی § 7103 اے۔ یہ شراکت پانچ سال پر محیط ہو سکتی ہے۔

سی پی سی شراکت کے لیے ممالک کا انتخاب کیسے کیا جاتا ہے؟

امریکی دفتر خارجہ کا انسانی بیوپار کی نگرانی اور خاتمے کا دفتر(ٹی آئی پی کا دفتر) متعدد امور کے جائزے اور دفتر خارجہ کے مختلف بیوروز اور دفاتر کے صلاح مشوروں، یوایس ایڈ، امریکی محکمہ محنت، امریکہ محکمہ انصاف اور جہاں موزوں ہو دیگر متعلقہ وفاقی اداروں سے مشاورت کی بنیاد پر ممالک کا انتخاب کرتا ہے۔ یہ انتخاب کرتے ہوئے ٹی آئی پی کا دفتر اس ملک کا بیانیہ اور انسانی بیوپار کے حوالے سے تازہ ترین رپورٹ میں اس ملک کے حوالے سے مرتب کی گئیں مخصوص سفارشات، انسانی بیوپار کی روک تھام کے لیے اس ملک کا قومی عملی منصوبہ اور تحفظ اطفال کے حوالے سے اس ملک کی قومی حکمت عملی کو مدنظر رکھتا ہے۔

کسی ملک کے حوالے سے مدنظر رکھے جانے والے مخصوص حقائق درج ذیل ہیں تاہم یہ فہرست انہی عوامل تک محدود نہیں:

  • ملک میں انسانی بیوپار کا پھیلاؤ اور انسانی بیوپار کے حوالے سے تازہ ترین سالانہ رپورٹ میں بیان کردہ بچوں کی خریدوفروخت کی مخصوص اقسام۔
  • حکومت کی جانب سے ‘تین پی’ (انسانی بیوپاریوں کے خلاف قانونی کارروائی، متاثرین کا تحفظ اور انسانی بیوپار کی روک تھام) نامی نمونے کے ذریعے بچوں کے بیوپار کی روک تھام سے نمٹنے کے لیے بامعنی اقدامات کی غرض سے حکومت کا عملی سیاسی ارادہ۔
  • حکومت کی جانب سے انسانی بیوپار کی روک تھام کے لیے امریکہ اور اندرون ملک سول سوسائٹی اور اس کام میں ماہر عالمی اداروں کے ساتھ شراکت میں کام کرنے کے عزم کا عملی مظاہرہ اور شراکت کے ذریعے منصوبے کی سرگرمیوں کی نگرانی اور تجزیے میں تعاون۔
  • نچلے یا متوسط درجے کی آمدنی والے ممالک پر خصوصی توجہ دیتے ہوئے متعلقہ ملک کی معاشی ترقی کی سطح کا جائزہ۔
  • میلینیم چیلنج کارپوریشن کی جانب سے تیار کی گئی اس ملک کی کامیابیوں کی فہرست (عوام پر سرمایہ کاری، معاشی آزادی کی حوصلہ افزائی اور منصفانہ حکمرانی)
  • فریڈم ہاؤس کی جانب سے تیار کردہ اس ملک کا سکور (آزادی، سیاسی حقوق، شہری آزادیاں)
  • بدعنوانی کے اندازے کا اشاریہ (ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل)
  • ورلڈ فیکٹ بک کے اعدادوشمار (بجٹ میں بچت/خسارہ، سکول کی تعلیم کا متوقع دورانیہ، شرح خواندگی، بچوں کی مشقت کی شرح، بیروزگاری کی شرح اور دیگر امور)
  • اس ملک میں امریکی حکومت کے دیگر متعلقہ پروگراموں کا تجزیہ (بچوں کی صحت و نمو، تحفظ اطفال، قانون کی حکمرانی، انسانی بیوپار کا خاتمہ، بچوں کی مشقت وغیرہ)
  • غیرملکی معاونت یا دوسرے ممالک کے ساتھ دیگر معاملات کے حوالے سے قوانین، پالیسی، اور مالیاتی پابندیوں کا جائزہ۔

‘سی پی سی’ شراکت کے تحت منصوبوں کے لیے کتنی مالی معاونت دستیاب ہوتی ہے؟

ٹی آئی پی کا دفتر نئی ‘سی پی سی’ شراکتوں کے تحت چلنے والے منصوبوں کے لیے اندازاً پچاس لاکھ ڈالر تک مہیا کرنے کی توقع کرتا ہے اور اس ضمن میں ٹی آئی پی کا دفتر مخصوص وسائل پر رقم خرچ کرنے کے لیے شراکت دار حکومتوں کی حوصلہ افزائی کرتا ہے۔

‘سی پی سی’ شراکت کار ملک کو معاونت کیسے فراہم کی جائے گی؟

یہ معاونت مالی مدد، باہمی تعاون کے معاہدوں یا سول سوسائٹی، عالمی تنظیموں یا انسانی بیوپار کی روک تھام میں مہارت کے حامل دیگر اداروں کے ساتھ ٹھیکوں کے ذریعے مہیا کی جاتی ہے۔

‘سی پی سی’ شراکت کا مقصد کیا ہے؟

‘سی پی سی’ شراکت کا مقصد کسی حکومت کے ساتھ مشترکہ طور پر مشترکہ عزم اور ایسی مالی مدد کے ذریعے کام کرنا ہے جو ضروریات کو مدنظر رکھ کر تیار کردہ منصوبوں کے ذریعے فراہم کی جاتی ہے۔ یہ منصوبے اس ملک میں بچوں کے بیوپار سے موثر طور پر نمٹنے کی غرض سے حکومت اور سول سوسائٹی کی کوششوں میں بہتری لانے کے لیے بنائے جاتے ہیں۔

‘سی پی سی’ شراکت کی تیاری کے دوران اس ملک میں انسانی بیوپار کی مخصوص صورتحال کا جائزہ لیا جاتا ہے اور پھر بچوں کی خریدوفروخت سے نمٹنے کی حکمت عملی زیربحث آتی ہے۔ اس کا مقصد ایسے امور کے بارے میں مشترکہ اور متفقہ عزم کا حصول ہوتا ہے جنہیں شراکتی دستاویز میں شامل کیا جانا ہوتا ہے۔ ان میں درج ذیل باتیں شامل ہو سکتی ہیں:

  • غیرملکی حکومت اور امریکہ کے وہ مخصوص مقاصد جنہیں ‘سی پی سی’ شراکت کی مدت میں حاصل کیے جانے کی توقع ہو۔
  • ایسے مقاصد کے حصول کے لیے شرکاء کی ذمہ داریاں (غیرملکی حکومت اور امریکہ)
  • امریکہ اور غیرملکی حکومت  کی جانب سے فراہم کیے جانے والے مالی و دیگر وسائل کا تخمینہ۔
  • ایسے مقاصد کے حصول کے لیے انجام دی جانے والی سرگرمیوں کا مختصر بیان،

اور

  • شراکتی سرگرمیوں پر عملدرآمد، پیش رفت کی نگرانی، نتائج کے جائزے اور شراکت کے خاتمے کے بعد حاص کی گئی کامیابیوں کو برقرار رکھنے کے طریقہائے کار۔

موجودہ ‘سی پی سی’ شراکتوں کے بارے میں  معلومات کے لیے یہ ویب سائٹ دیکھیے: https://www.state.gov/j/tip/cpc/


یہ ترجمہ ازراہِ نوازش فراہم کیا جا رہا ہے اور صرف اصل انگریزی ماخذ کو ہی مستند سمجھا جائے۔
تازہ ترین ای میل
تازہ ترین اطلاعات یا اپنے استعمال کنندہ کی ترجیحات تک رسائی کے لیے براہ مہربانی اپنی رابطے کی معلومات نیچے درج کریں