rss

افغان امن عمل سے متعلق چار فریقی مشترکہ بیان

Русский Русский, English English, हिन्दी हिन्दी

امریکی دفتر خارجہ
دفتر برائے ترجمان
برائے فوری اجرا
12 جولائی 2019

 

درج ذیل بیان کا متن امریکہ، روس، پاکستان اور چین کی حکومتوں نے 10 اور 11 جولائی 2019 کو افغان امن عمل سے متعلق بیجنگ میں  چار فریقی اجلاس کے موقع پر مشترکہ طور پر جاری کیا۔

آغاز متن:

چین، روس اور امریکہ کے نمائندوں نے افغان امن عمل سے متعلق بیجنگ میں تیسری مشاورت کی۔ چین، روس اور امریکہ نے اس مشاورت میں پاکستان کی شمولیت کا خیرمقدم کیا اور وہ سمجھتے ہیں کہ پاکستان افغانستان میں قیام امن کے لیے سہولت دینے میں اہم کردار ادا کر سکتا ہے۔ پاکستان  نے افغان امن عمل پر چین، روس اور امریکہ  میں سہ طرفی مشاورت کی تعمیری کوششوں کو سراہا۔

چاروں فریقین نے موجودہ صورتحال اور افغانستان و خطے میں امن، استحکام اور خوشحالی کے فروغ کے لیے ایک سیاسی سمجھوتے کو عملی جامہ پہنانے کی مشترکہ کوششوں پر تبادلہ خیال کیا۔ چاروں فریقین نے 25 اپریل 2019 کو ماسکو میں طے پانے والے افغان امن عمل پر سہ طرفی اتفاق رائے کی اہمیت پر زور دیا۔ تمام فریقین نے اہم متعلقہ گروہوں کی جانب سے بات چیت آگے بڑھانے اور ایک دوسرے سے روابط میں اضافے جیسی حالیہ مثبت پیش رفت کا خیرمقدم کیا۔ تمام فریقین نے ماسکو اور دوحہ میں منعقدہ بین افغان اجلاسوں کا بھی خیرمقدم کیا۔

چاروں فریقین نے متعلقہ گروہوں  سے کہا کہ وہ امن کے موقع سے فائدہ اٹھائیں اور طالبان، افغان حکومت اور دیگر افغانوں کے درمیان بین افغان بات چیت فوری شروع کی جائے۔ فریقین نے اس بات کی ازسرنو توثیق کی کہ یہ بات چیت افغانوں کے زیرقیادت اور افغانوں کے لیے قابل قبول ہونی چاہیے اور مزید اتفاق کیا کہ اس گفت و شنید کے نتیجے میں جتنا جلد ممکن ہو امن کا طریقہ کار سامنے آنا چاہیے۔ اس طریقہ کار میں سلامتی کی صورتحال سے متعلق باضابطہ اور ذمہ دارانہ تبدیلی کی ضمانت ملنی چاہیے اور مستقبل کے لیے ایسے جامع سیاسی انتظام کی تفصیل موجود ہونی چاہیے  جو تمام افغانوں کے لیے قابل قبول ہو۔

چاروں فریقین نے تمام گروہوں کی حوصلہ افزائی کی کہ وہ جامع اور مستقل جنگ بندی کے لیے تشدد میں کمی لانے کے اقدامات اٹھائیں اور یہ جنگ بندی بین افغان بات چیت کے ساتھ شروع ہو۔

چاروں فریقین نے باہمی مشاورت کا تسلسل برقرار رکھنے پر اتفاق کیا۔ اس سلسلے میں 25 اپریل 2019 کو طے پانے والے سہ طرفی اتفاق رائے کی بنیاد پر دیگر اہم فریقین کو بھی اس عمل میں شرکت کی دعوت دی جائے گی۔ یہ وسیع گروپ بین افغان بات چیت کے آغاز پر اجلاس کرے گا۔ آئندہ مشاورت کی تاریخ اور مقام پر سفارتی ذرائع سے طے ہوں گے۔

اختتام متن


یہ ترجمہ ازراہِ نوازش فراہم کیا جا رہا ہے اور صرف اصل انگریزی ماخذ کو ہی مستند سمجھا جائے۔
تازہ ترین ای میل
تازہ ترین اطلاعات یا اپنے استعمال کنندہ کی ترجیحات تک رسائی کے لیے براہ مہربانی اپنی رابطے کی معلومات نیچے درج کریں