rss

ایران کے عوام آزادانہ و منصفانہ انتخابات کے حقدار ہیں

English English, العربية العربية, हिन्दी हिन्दी

امریکی دفتر خارجہ
دفتر برائے ترجمان
وزیر خارجہ مائیکل آر پومپیو کا بیان
20 فروری 2020

 

آج امریکہ نے ایران کی شوریٰ نگہبان اور انتخابات کی نگرانی سے متعلق اس کی کمیٹی کے چار ارکان کو پابندی کے لیے نامزد کیا۔ اس کمیٹی نے ایرانی عوام کو آزادانہ و منصفانہ انتخابات کے حق سے محروم رکھنے میں کردار ادا کیا ہے۔ پابندی کے لیے نامزد کیے جانے والوں میں شوریٰ نگہبان کے سیکرٹری احمد جنتی بھی شامل ہیں جنہوں نے ماضی میں سیاسی منحرفین کی ہلاکتوں کے اقدام کو سراہا تھا اور ایرانی حکام سے کہا تھا کہ وہ ایسے زیادہ سے زیادہ لوگوں کو پھانسی پر لٹکائیں۔

جنتی جیسے مذہبی پیشواؤں نے گزشتہ 41 برس سے ایرانی عوام کو انتخابات میں اپنی مرضی کے نمائندے منتخب کرنے سے محروم رکھا ہے۔ آج پابندی کے لیے نامزد ہونے والے حکام ایران کے غیرمنتخب سپریم لیڈر کی جانب سے تعینات کیے گئے تھے یا ان سے وابستہ تھے۔ وہ ایک ایسے انتخابی عمل کے نگران ہیں جو ایرانی عوام کی آوازوں کو خاموش اور سیاسی عمل میں ان کی شرکت  کو محدود کرتا ہے۔ 21 فروری کو ایران میں ہونے والے پارلیمانی انتخابات سے قبل شوریٰ نگہبان نے 7000 سے زیادہ امیدواروں کو انتخابات میں حصہ لینے سے ہی روک دیا ہے۔ ان میں بہت سے لوگ ایسے ہیں جنہوں نے سپریم لیڈر کی سیاست پر سوال اٹھائے تھے۔ یہ شرمناک عمل ہے۔ یہ آزادانہ و منصفانہ طریقہ کار نہیں ہے۔

ایرانی عوام اندرون ملک اس حکومت کے مظالم اور بیرون ملک اس کی متشدد حماقتوں  کے مخالف ہیں۔ انہیں نظرانداز کیے جانے یا قتل ہونے کے خوف سے بے نیاز ہو کر اپنی آراء کے اظہار کا موقع ملنا چاہیے۔ ایرانی عوام کی آواز سنی جانی چاہیے۔ امریکہ ایران کے پرجوش عوام کے ساتھ کھڑا ہے اور ہم آزادانہ و منصفانہ انتخابات کے لیے ان کی آواز میں اپنی آواز ملاتے ہیں۔ 


یہ ترجمہ ازراہِ نوازش فراہم کیا جا رہا ہے اور صرف اصل انگریزی ماخذ کو ہی مستند سمجھا جائے۔
تازہ ترین ای میل
تازہ ترین اطلاعات یا اپنے استعمال کنندہ کی ترجیحات تک رسائی کے لیے براہ مہربانی اپنی رابطے کی معلومات نیچے درج کریں