rss

بین الافغان بات چیت اور امن کی راہ ترجمان دفتر خارجہ مورگن اورٹیگس کا بیان

العربية العربية, English English, Français Français, हिन्दी हिन्दी

امریکی دفتر خارجہ
دفتر برائے ترجمان
10 مارچ 20202

 

امریکہ۔طالبان معاہدے اور گزشتہ ہفتے امریکہ۔افغان مشترکہ اعلامیے میں 10 مارچ بین الافغان گفت و شنید کے آغاز کی تاریخ کہی  گئی تھی۔ اب جبکہ بین الافغان بات چیت کی تیاریاں جاری ہیں تو ایسے میں افغانستان میں صدارتی انتخابی بحران کے سبب قومی مذاکراتی ٹیم کے نام کا اعلان تاخیر کا شکار ہو گیا ہے۔ صدر غنی نے ہمیں بتایا تھا کہ وہ ڈاکٹر عبداللہ اور دوسرے افغان رہنماؤں سے مشاورت کر رہے ہیں اور آئندہ چند روز میں ایک ایسی ٹیم کا اعلان کریں گے جس میں تمام فریقین کی نمائندگی ہو گی۔

دیگر مسائل بدستور باقی ہیں۔ طالبان کی جانب سے بڑے درجے کا حالیہ تشدد ناقابل قبول ہے۔ ہم تسلیم کرتے ہیں کہ طالبان نے اتحادیوں کے خلاف اور شہروں میں حملے روکنے کے اقدامات اٹھائے ہیں۔ تاہم وہ شہروں سے باہر بڑی تعداد میں افغانوں کو ہلاک کر رہے ہیں۔ اس صورتحال کو تبدیل ہونا چاہیے۔ اس درجے کا تشدد دونوں فریقین کو ایک موذی چکر میں ڈال دے گا، اس سے کسی کو فائدہ نہیں ہو گا، اور امن کمزور پڑ جائے گا۔


یہ ترجمہ ازراہِ نوازش فراہم کیا جا رہا ہے اور صرف اصل انگریزی ماخذ کو ہی مستند سمجھا جائے۔
تازہ ترین ای میل
تازہ ترین اطلاعات یا اپنے استعمال کنندہ کی ترجیحات تک رسائی کے لیے براہ مہربانی اپنی رابطے کی معلومات نیچے درج کریں