rss

کوویڈ۔19 اور انٹرنیٹ کی آزادی پر فریڈم آن لائن کولیشن کا بیان

English English, العربية العربية, हिन्दी हिन्दी

امریکی دفتر خارجہ
دفتر برائے ترجمان
27 مئی 2020

 

فریڈم آن لائن کولیشن (ایف او سی) 31 ممالک کا گروہ ہے جنہوں نے انسانی حقوق کے عالمگیر اعلامیے (یو ڈی ایچ آر) میں بیان کردہ انسانی حقوق اور بنیادی آزادیوں کے فروغ اور تحفظ کا بھرپور عزم کر رکھا ہے۔ ہم سمجھتے ہیں کہ افراد کو جو انسانی حقوق اور بنیادی آزادیاں عام زندگی میں حاصل ہیں ان کا آن لائن تحفظ بھی ہونا چاہیے۔ ہم دنیا بھر کے لوگوں کے لیے انٹرنیٹ کی آزادی بشمول اظہار، میل جول اور  پُرامن اجتماع کی آزادیوں سمیت آن لائن نجی زندگی کے حقوق کی حمایت میں مل کر کام کرنے کا عہد کیے ہوئے ہیں۔

”ایف او سی” کوویڈ۔19 کی عالمگیر وبا کی موجودگی میں ہر جگہ لوگوں کے خدشات سامنے لاتا ہے جن میں اس وبا سے وابستہ منفی معاشی اثرات بھی شامل ہیں اور یہ اتحاد ہنگامی اقدامات کے نفاذ کے ذریعے اس وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کی حکومتی کوششوں کی شناخت کرتا ہے۔ اس کے ساتھ،  اب پہلے سے کہیں زیادہ آن لائن سرگرمیاں ہو رہی ہیں اور ہمیں حکومتوں کی جانب سے اس بحران کے خلاف متعارف کرائے گئے مخصوص اقدامات، افعال اور ڈیجیٹل ایپلی کیشنز کے انسانی حقوق پر اثرات بارے خدشات ہیں۔ ایسے اقدامات میں جبری یا غیرقانونی نگرانی، انٹرنیٹ کی جزوی یا مکمل بندش، آن لائن مواد کی ضابطہ کاری اور سنسرشپ شامل ہیں جو کہ  انسانی حقوق کے قانون سے مطابقت نہیں رکھتے۔ ہمیں اظہار، میل جول اور پُرامن اجتماع کے حق اور نجی زندگی سے متعلق حقوق پر ان اقدامات کے مختصر اور طویل مدتی اثرات پر مزید تشویش ہے۔

احتساب اور آن لائن انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں اور پامالیوں کا موثر تدارک نہ ہونے سے سرکاری حکام پر اعتماد میں کمی آنے کا خدشہ ہے جس کے نتیجے میں کسی بھی مزید سرکاری اقدام کی تاثیر کمزور پڑ سکتی ہے۔ انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں اور پامالیوں سے امتیازی سلوک کا خدشہ بھی بڑھ جاتا ہے اور اس سے پہلے ہی پسماندہ اور غیرمحفوظ گروہوں کے ارکان کو غیرمتناسب طور سے نقصان ہو سکتا ہے جن میں خواتین، لڑکیاں اور ایسے دوسرے افراد شامل ہیں جنہیں بہت سے اور متقاطع طرز کے امتیازی سلوک کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔ انسانی حقوق کی آن لائن خلاف ورزی  اور پامالی ”ایف او سی” کے آن لائن انسانی  حقوق پر عملدرآمد کے فروغ اور ایک کُھلے، آزاد(1)، محفوظ، قابل اعتماد اور متعامل انٹرنیٹ کے اہداف کے لیے براہ راست خطرہ ہیں۔

مزید برآں ”ایف او سی” کو آن لائن غلط اطلاعات اور سرگرمیوں کے پھیلاؤ پر بھی تشویش ہے جن کا مقصد کوویڈ۔19 وبا کی آڑ میں ضرررساں ارادوں کی تکمیل ہوتا   ہے۔ ان میں قوانین کی بنیاد پرقائم  عالمگیر نظام کو کمزور کرنے اور جمہوریت و انسانی حقوق کی حمایت ختم کرنے کے لیے معلومات کو توڑموڑ کر پیش کرنا اور غلط اطلاعات پھیلانا شامل ہیں۔ حقائق پر مبنی اور درست معلومات تک رسائی، بشمول آن لائن اور آف لائن آزاد اور غیرجانبدار میڈیا کے ذریعے لوگوں کو سچائی سے آگاہ کرنے کے نتیجے میں انہیں کوویڈ۔19 وائرس کا پھیلاؤ روکنے کے لیے ضروری حفاظتی اقدامات اٹھانے، زندگیاں بچانے اور آبادی میں غیرمحفوظ گروہوں کے تحفظ میں مدد ملتی ہے۔

ہم اس بات پر زور دیتے ہیں کہ ”ایف او سی” کے قیام کی دستاویزات میں بیان کردہ وعدے اور اصول بے حد اہمیت کے حامل ہیں۔ ہم مزید زور دے کر کہتے ہیں کہ دنیا بھر کے ممالک یہ امر یقینی بنائیں کہ اس وبا سے نمٹنے کے لیے اٹھائے گئے اقدامات عالمگیر انسانی حقوق کے قانون کے مطابق ہوں۔ ایسے اقدامات کو صحت عامہ کے جائز تحفظ کی ضرورت تک محدود ہونا چاہیے جس میں یہ بھی شامل ہو کہ ایسے اقدامات کوویڈ۔19 بحران سے نمٹنے کی مخصوص مدت کے لیے اٹھائے جائیں۔ نجی زندگی اور دیگر متعلقہ حقوق اور آزادیوں میں کسی بھی طرح کی مداخلت شہری و سیاسی حقوق کے عالمگیر معاہدے اور ”یوڈی ایچ آر” کے مطابق ہونی چاہیے۔ اس شرط کا آن لائن یا آف لائن دونوں طرح کی سرگرمی پر عائد ہونے والی پابندیوں پر اطلاق ہوتا ہے۔ ہم اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل، اقوام متحدہ کے ہائی کمشنر برائے انسانی حقوق اور اقوام متحدہ کے خصوصی رپورٹروں اور ماہرین کی جانب سے اس معاملے پر توجہ کا خیرمقدم کرتے ہیں۔

کوویڈ۔19 وبا کے خلاف اقدامات کے حوالے سے ہم دنیا بھر کی حکومتوں سے کہتے ہیں کہ وہ:

  • ایسے قوانین اور پالیسیاں اختیار کرنے یا ان پر عملدرآمد سے باز رہیں جن سے انسانی حقوق پر منفی اثر پڑ سکتا ہو یا جن کے باعث انسانی حقوق کے عالمگیر قانون کے تحت ریاستی ذمہ داریوں کی خلاف ورزی کے نتیجے میں آن لائن اور آف لائن شہری آزادی ناواجب طور سے محدود ہو جاتی ہو۔
  • اظہار کی آزادی اور آن لائن معلومات تک رسائی کے لیے سازگار ماحول کو فروغ دیں تاکہ نجی معلومات کا تحفظ ممکن ہو سکے اور مواد پر ایسی پابندیاں عائد کرنے سے باز رہیں جن سے انسانی حقوق کے عالمگیر قانون کی خلاف ورزی ہوتی ہو۔
  • افراد اور گروہوں بشمول انسانی حقوق کے محافظوں کے خلاف  انٹرنیٹ پر اور ڈیجیٹل ٹیکنالوجی کے ذریعے تشدد، دھمکیوں، خطرات اور حملوں کی روک تھام کے لیے مناسب اقدامات کریں۔
  • انٹرنیٹ پر بندش کا فوری خاتمہ کریں اور ڈیجیٹل تقسم پاٹنے کے لیے اقدامات کر کے آن لائن خدمات تک ہرممکن حد تک وسیع تر رسائی یقینی بنائیں، اور
  • عہد کریں کہ ہنگامی اقدامات یا قوانین کی موافقت سے کیے گئے کوئی بھی فیصلے موثر طور سے شفاف اور قابل احتساب ہوں اور جب وبا گزر جائے تو یہ اقدامات واپس لے لیے جائیں۔

۔۔۔۔ خود سے یہی کچھ کرنے کا عہد کرتے ہوئے۔

  • یہاں ‘آزاد’ سے ‘بلاقیمت ‘ مرادنہیں ہے۔

یہ ترجمہ ازراہِ نوازش فراہم کیا جا رہا ہے اور صرف اصل انگریزی ماخذ کو ہی مستند سمجھا جائے۔
تازہ ترین ای میل
تازہ ترین اطلاعات یا اپنے استعمال کنندہ کی ترجیحات تک رسائی کے لیے براہ مہربانی اپنی رابطے کی معلومات نیچے درج کریں