rss

مادورو کی غیرقانونی حکومت کی مدد کرنے پر ایرانی تیل بردار بحری جہازوں کے کپتانوں پر پابندیاں

English English, Español Español, العربية العربية, हिन्दी हिन्दी

امریکی دفتر خارجہ
دفتر برائے ترجمان
مادورو کی غیرقانونی حکومت کی مدد کرنے پر ایرانی تیل بردار بحری جہازوں کے کپتانوں پر پابندیاں
وزیر خارجہ مائیکل آر پومپیو کا بیان
24 جون 2020

 

آج امریکہ انتظامی حکم 13599 کے تحت ایرانی بحری جہازوں کے پانچ کپتانوں پر پابندیاں عائد کر رہا ہے جنہوں نے مادورو کی غیرقانونی حکومت کی مدد کے لیے قریباً 1.5 ملین بیرل ایرانی گیس اور اس سے متعلقہ اجزا وینزویلا کو پہنچائے۔  ایرانی جھنڈے والے پانچ تیل بردار بحری جہازوں” کلیول، پیٹونیا، فارچون، فاریسٹ اور فیکسون” کو وینزویلا کے ساحلوں پر لانے والے ان پانچوں افراد  کا نام محکمہ خزانہ میں غیرملکی اثاثہ جات قبضے میں لینے سے متعلق دفتر کی جانب سے خصوصی طور پرنامزد اور پابندیوں کی زد میں آنے والے افراد (ایس  ڈی این فہرست) میں شامل کر لیا گیا ہے۔

کراکس اور تہران میں سرکش حکومتیں اپنے لوگوں پر جبر ، بدعنوانی، اپنی جیبیں بھرنے اور اپنے عوام  کی دولت میں وسیع پیمانے پر بدانتظامی کے یکساں  رحجان کے سبب باہم یکجا ہیں۔ مادورو حکومت نے وینزویلا کے فراواں قدرتی وسائل میں اس قدر بدانتظامی کی ہے  کہ اب  اسے ایران سے گیس درآمد کرنا پڑی ہے اور مادورو کی جانب سے مساوی اور منصفانہ طور پر گیس کی تقسیم کے دعووں پر کوئی یقین نہیں کرتا۔ ایران کی جانب سے وینزویلا کی مسلسل معاونت اس امر کی ایک اور مثال ہے کہ کیسے یہ حکومت اپنے عوام کے وسائل بیرون ملک بے سوچی سمجھی مہمات پر ضائع کر رہی ہے جن سے بیرون ملک مصائب میں اضافہ ہوتا ہے۔ جمہوری تبدیلی ہی وینزویلا کے مسائل کا واحد حل ہے جس  سے آزادی اور خوشحالی واپس آنے کی ضمانت ملتی ہے۔

آج عائد کی جانے والی پابندیوں کے نتیجے میں ان کپتانوں کے اثاثے منجمد ہو جائیں گے۔ اس نامزدگی سے ان کی نوکریاں اور مستقبل کے اچھے امکانات بھی متاثر ہوں گے۔ جو جہاز راں ایران اور وینزویلا کے ساتھ کام کرنے کی بابت سوچ رہے ہیں انہیں یہ بات سمجھنی چاہیے کہ ان جابر حکومتوں کی مدد کرنے سے کوئی فائدہ نہیں ہو گا۔ جو لوگ اور ادارے ایرانی حکومت، مادورو یا اس کے حامیوں کے ساتھ کاروبار کریں گے انہیں امریکہ کی جانب سے نتائج کا سامنا کرنا پڑے گا۔


یہ ترجمہ ازراہِ نوازش فراہم کیا جا رہا ہے اور صرف اصل انگریزی ماخذ کو ہی مستند سمجھا جائے۔
تازہ ترین ای میل
تازہ ترین اطلاعات یا اپنے استعمال کنندہ کی ترجیحات تک رسائی کے لیے براہ مہربانی اپنی رابطے کی معلومات نیچے درج کریں