rss

امریکی حکومت کا ہانگ کانگ کو ممنوعہ دفاعی سازوسامان کی برآمد کے خاتمے کا فیصلہ

العربية العربية, English English

امریکی دفتر خارجہ
دفتر برائے ترجمان
29 جون 2020

 

چینی کمیونسٹ پارٹی کی جانب سے ہانگ کانگ کی آزادیاں سلب کرنے کے فیصلے نے ٹرمپ انتظامیہ کو اس علاقے کے حوالے سے اپنی پالیسیوں کا ازسرنو جائزہ لینے پر مجبور کر دیا ہے۔ چونکہ بیجنگ قومی سلامتی کا قانون پاس کرنے کے اقدامات اٹھا رہا ہے اس لیے امریکہ آج اپنی سرزمین پر تیار کردہ دفاعی سازوسامان کی ہانگ کانگ کو برآمدات بند کر دے گا اورہانگ کانگ کے لیے امریکہ کی دفاعی اور دہرے  مقاصد کے لیے استعمال ہونے والی ٹیکنالوجی پر بھی ویسی ہی پابندیاں عائد کرنے کے اقدامات اٹھائے گا جو اس نے چین پر عائد کر رکھی ہیں۔

امریکہ کو اپنی قومی سلامتی کے تحفظ میں اس اقدام پر مجبور ہونا پڑا ہے۔ ہم ممنوعہ اشیا کی برآمدات کے حوالے سے ہانگ کانگ یا چین میں مزیدفرق نہیں رکھ سکتے۔ ہم ان اشیا کے پیپلزلبریشن آرمی کے ہاتھوں میں جانے کا خطرہ مول نہیں لے سکتے جس کا بنیادی مقصد ہرممکن طریقے سے سی سی پی کی آمریت قائم رکھنا ہے۔

یہ اقدام اقوام متحدہ میں مندرج چین۔برطانیہ اعلامیے کے تحت اپنے ہی وعدوں سے انحراف کے چینی فیصلے کا براہ راست نتیجہ ہے اور ہمیں اس پر کوئی خوشی نہیں ہے۔ ہمارے اقدامات چینی عوام کے خلاف نہیں بلکہ حکومت کے خلاف ہیں۔ چونکہ چین ہانگ کانگ کے حوالے سے ”ایک ملک، ایک  نظام” کے اصول پر عمل پیرا ہے تو ہم بھی یہی کچھ کر رہے ہیں۔ امریکہ اس حوالے سے اپنے دیگر اختیارات کا جائزہ بھی لے رہا ہے اور ہانگ کانگ میں زمینی حقیقت کو سامنے لانے کے لیے مزید اقدامات اٹھائے گا۔


یہ ترجمہ ازراہِ نوازش فراہم کیا جا رہا ہے اور صرف اصل انگریزی ماخذ کو ہی مستند سمجھا جائے۔
تازہ ترین ای میل
تازہ ترین اطلاعات یا اپنے استعمال کنندہ کی ترجیحات تک رسائی کے لیے براہ مہربانی اپنی رابطے کی معلومات نیچے درج کریں