rss

انسانی فلاح کے عالمی دن پر وزیر خارجہ مائیکل آر پومپیو کا بیان

Español Español, English English, Português Português, العربية العربية, Français Français, Русский Русский

امریکی دفتر خارجہ
دفتر برائے ترجمان
برائے فوری اجراء
19 اگست 2020

 

انسانی فلاح کے عالمی دن پر ہم اُن امدادی کارکنوں کو خراج عقیدت پیش کرتے ہیں جنہوں نے زندگیوں کے تحفظ اور دنیا کے انتہائی کمزور لوگوں کے مصائب میں کمی لانے کے لیے انتہائی بڑی قربانیاں دیں۔ ہم ان لوگوں کے انتھک عزم کا اعتراف کرتے ہیں جنہوں نے اپنی اور دوسروں کی زندگیوں کو فوقیت دی اور جنہوں نے اپنی صحت اور تحفظ کو لاحق خطرات کے باوجود دوسروں کی زندگی کو تحفظ دینے کا کام جاری رکھا ہوا ہے۔ انہیں اپنا یہ اعلیٰ کام حفاظت اور سلامتی سے انجام دینے کے قابل ہونا چاہیے۔  لازم ہے کہ مسلح جنگوں کے تمام فریقین عالمگیر انسانی قانون کے تحت اپنی ذمہ داریاں بجا لائیں اور امدادی کام انجام دینے والے عملے کا تحفظ اور سلامتی یقینی بنانے کے لیے کام کریں۔ صحت اور امداد کے شعبوں میں کام کرنے والوں پر حملے لاکھوں لوگوں کو نگہداشت اور تحفظِ زندگی کے لیے درکار امداد سے محروم کر کے ان کی زندگیوں کو خطرے میں ڈالتے ہیں۔ عالمی وباء کے دوران بھی یہ رجحان بدترین صورت اختیار کرتا جا رہا ہے۔

امریکہ دنیا بھر میں جنم لینے والے انسانی بحرانوں سے نمٹنے میں قیادت کی دیرینہ روایت کا حامل ہے۔ مالی سال 2019 میں امریکہ نے خوراک، پناہ، صحت، تعلیم، پینے کے صاف پانی اور نکاسی آب کے لیے 9.25 بلین ڈالر مہیاء کیے۔ اس امداد سے دنیا بھر میں بحرانوں سے متاثرہ لاکھوں لوگوں کو فائدہ پہنچا جن میں جنگ کے نتیجے میں بے گھر ہونے والے لوگ بھی شامل ہیں۔ گزشتہ دہائی میں امریکہ نے دنیا بھر میں انسانی امداد کے طور پر 70 بلین ڈالر سے زیادہ رقم فراہم کی ہے۔ ہم مستقل طور سے اقوام متحدہ کے ہائی کمیشن برائے مہاجرین، مہاجرت سے متعلق عالمی ادارے، امدادی امور کے ارتباط سے متعلق اقوام متحدہ کے دفتر، خوراک کے عالمی پروگرام، یونیسف، اور ریڈ کراس کی عالمی کمیٹی کے علاوہ بہت سے عالمی و مقامی غیرسرکاری اداروں کے واحد سب سے بڑی عطیہ دہندہ ہیں۔ یہ دنیا میں سب سے بڑے امدادی ادارے سمجھے جاتے ہیں۔ اس میں امدادی کارکنوں کا تحفظ اور سلامتی یقینی بنانے کے لیے دی جانے والی معاونت بھی شامل ہے۔ یہ کارکن شام سے وینزویلا اور شمال مشرقی نائجیریا سے برما تک خطرناک حالات کا شکار انتہائی کمزور لوگوں بشمول مسلح جنگوں کے متاثرین کا بہادرانہ طور سے خیال رکھتے ہیں۔ ضرورت مندوں کی امداد کے لیے امریکی عوام کا گہرا عزم امریکہ کی حکومت کی جانب سے فراہم کردہ سرکاری امداد تک ہی محدود نہیں ہے۔ یہ امریکہ کے عام شہریوں، سول سوسائٹی و غیرسرکاری اداروں بشمول مذہبی بنیاد پر کام کرنے والی تنظیموں، نجی شعبے اور ایسے بہت سے امریکیوں میں بھی دیکھا گیا ہے جنہوں نے اپنی زندگیاں امدادی کام کے لیے وقف کر دی ہیں۔

بے گھری پر مجبور ہونے والوں کی تعداد میں تاریخی اضافے اور اب کوویڈ۔19 وبا کے نتیجے میں جنم لینے والے صحت اور معیشت کے عالمگیر بحران میں عالمی سطح پر امدادی ضروریات بڑھ رہی ہیں۔ ایسے میں امریکہ بحران کے خلاف  مربوط عالمگیر ردعمل اور امدادی  ضروریات پوری کرنے کے لیے درکار وسائل میں مزید حصہ ڈالنے کے لیے دوسری حکومتوں کی حوصلہ افزائی کے لیے اپنا بنیادی کردار ادا کرتا رہے گا۔ مثال کے طور پر کوویڈ۔19 کے خلاف اقدامات میں امریکہ کے قائدانہ کردار نے موجودہ اور بڑھتے ہوئے بحرانی حالات میں انتہائی کمزور لوگوں کی اعانت کے لیے بے مثل امداد مہیا کی ہے۔ اس امداد کی ترسیل اُن مخلص امدادی کارکنوں کی بدولت ہی ممکن ہوئی جنہیں ہم آج خراج تحسین پیش کر رہے  ہیں اور جو ان سے پہلے گزر گئے ہیں۔


یہ ترجمہ ازراہِ نوازش فراہم کیا جا رہا ہے اور صرف اصل انگریزی ماخذ کو ہی مستند سمجھا جائے۔
تازہ ترین ای میل
تازہ ترین اطلاعات یا اپنے استعمال کنندہ کی ترجیحات تک رسائی کے لیے براہ مہربانی اپنی رابطے کی معلومات نیچے درج کریں