rss

ٹی بی کے خاتمے کے لیے یوایس ایڈ کے ‘گلوبل ایکسیلیریٹر’ پروگرام کے سالانہ دن پر یوایس ایڈ کے قائم مقام منتظم جان بارسا کا بیان

Français Français, English English, हिन्दी हिन्दी

امریکی ادارہ برائے عالمی ترقی
دفتر تعلقات عامہ
برائے فوری اجرا
29 ستمبر 2020

 

دو سال پہلے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی اور امریکی ادارہ برائے عالمی ترقی (یوایس ایڈ) نے تپ دق (ٹی بی) کے خاتمے کے لیے ”گلوبل ایکسیلیریٹر” نامی پروگرام شروع کیا تھا جو کہ دنیا کی اس مہلک ترین متعدی بیماری کا مقابلہ کرنے کے لیے ہمارے اقدامات کا نیا  نمونہ ہے۔ یوایس ایڈ نے بڑے پیمانے پر ٹی بی سے متاثرہ ممالک اور دیگر شراکت داروں کے سربراہان ریاست کے ساتھ مل کر 2022 تک مزید 40 ملین لوگوں میں ٹی بی کی تشخیص اور علاج کے لیے ان کے اندراج کا جرات مندانہ ہدف حاصل کرنے کا عہد کیاہے۔

گزشتہ دو برس میں اس پروگرام نے ٹی بی کے خلاف قومی عزم اور اس سے نمٹنے کی صلاحیت پیدا کرنے کے سلسلے میں متاثر کن پیش رفت کی ہے۔ اس پروگرام کے ذریعے یوایس ایڈ نے 18 ممالک کے وزرائے صحت کے ساتھ مضبوط تر تعاون اور شفافیت کے لیے ”ٹی بی سے متعلق شراکت کے اعلان ناموں” پر دستخط کیے، ٹی بی کے 24 قومی پروگراموں میں تکنیکی مشیر مقرر کیے اور ان ممالک میں مقامی سطح پر 33 اداروں کی براہ راست مدد کی جن میں مقامی آبادی اور مذہبی بنیادوں پر کام کرنے والے گروہ بھی شامل ہیں۔ اس اقدام کا مقصد ٹی بی سے بری طرح متاثرہ لوگوں کو بااختیار بنانا تھا۔ علاوہ ازیں یوایس ایڈ نے ”چیلنج فیسیلٹی فار سول سوسائٹی” نامی پروگرام کے تحت 13 ممالک میں امداد کے ذریعے نچلی سطح پر کام کرنے والی 31 تنظیموں کے لیے مالی معاونت میں بھی اضافہ کیا ہے۔

شراکت دار ممالک میں ٹی بی کے علاج میں خودانحصاری کے سفر کو ترقی دینے کے لیے ایکسیلیریٹر پروگرام کے تحت مقامی سطح پر مضبوط اور پائیدار ادارے قائم کرنے کو ترجیح دی جاتی ہے۔ یہ ادارے قائم ہو چکے ہیں اور مقامی آبادیوں کو ٹی بی سے نمٹنے میں مدد دینے کے لیے ا ن کی خدمات باآسانی دستیاب ہیں۔ ایسے وقت میں جب صحت کی بہت سی سرکاری سہولیات بند ہو چکی ہیں، اس پروگرام کے مقامی شراکت دار کوویڈ۔19 وبا کے دوران ٹی بی کے مریضوں کی نگہداشت جاری رکھنے میں بے حد اہم ثابت ہوئے ہیں۔

اب جبکہ دنیا کوویڈ۔19 کا مقابلہ کرنے کے لیے متحد ہے تو ایسے میں ٹی بی کے خاتمے کے لیے ہماری کوششیں اکارت جانے سے روکنا اہم ہے۔ اندازے کے مطابق کوویڈ۔19 اور اس سے متعلقہ لاک ڈاؤن اور کاروبارِ زندگی میں پیدا ہونے والے خلل کے نتیجے میں ٹی بی کے خلاف اب حاصل ہونے والی کامیابی پانچ سال پیچھے جانے کا خدشہ ہے جس کا نتیجہ ٹی بی کے غیرتشخیصی اور بے علاج کیسز میں اضافے کی صورت میں نکلے گا، یہ بیماری مزید پھیلے گی اور خاندانوں، مقامی آبادیوں اور ممالک  پر اس کے منفی اثرات میں مزید اضافہ ہو گا۔

اسی خدشے کے پیش نظر ایکسیلیریٹر پروگرام کے  اس مسئلے کو مقامی سطح پر حل کرنے اور اس کے خلاف مزید موثر اور کارگزار اقدامات کی اہمیت پہلے سے کہیں بڑھ گئی ہے۔ یو ایس ایڈ دنیا بھر میں ٹی بی کے خاتمے کی کوششوں میں امریکی حکومت کے سرکردہ ادارے کی حیثیت سے کوویڈ۔19 کے نتیجے میں ہونے والے نقصان کا ازالہ اور ٹی بی کا خاتمہ کرنے کے لیے قومی صلاحیت میں اضافہ جاری رکھے گا۔


یہ ترجمہ ازراہِ نوازش فراہم کیا جا رہا ہے اور صرف اصل انگریزی ماخذ کو ہی مستند سمجھا جائے۔
تازہ ترین ای میل
تازہ ترین اطلاعات یا اپنے استعمال کنندہ کی ترجیحات تک رسائی کے لیے براہ مہربانی اپنی رابطے کی معلومات نیچے درج کریں